سچ کا مجھے یہ صلہ د یا جا رہا ہے.فرحان بنگش

عوام کو سچائی سے باخبر رکھنااور سچی صحافت اگر جرم ہے تو پر یہ بڑے بڑے اخبارات اور چینلزبند کر دیئے جائے۔فرہان بنگش

کوہاٹ: سچ کا مجھے یہ صلہ د یا جا رہا ہے کیو نکہ میں بر و قت میڈ یا کو ا نتظا میہ کی سستی اور غفلت کی و جہ سے کوہاٹ میں امن کی خرابی کی اطلاع دی موقع پر میرا موجود ہونا میرا فرض اور ڈیوٹی اور سچائی بیان کرنا میرا صحافت کہ اول پہلوہے جس کی مجھے اسی کڑوی سزا دی جارہی ہے ایک حوالات میں پہلے 6 دن اور پھر 7 دن ریمانڈ پر ناراض نہیں بلکہ اپنے قانون اور صحافت کو نہ سمجھنے والوں پر افسوس ہورہا ہے میرا تعلق کسی تنظیم سے نہیں بلکہ صحا فت میری پہچان ہے اس بات سے کوہا ٹ کا بچہ بچہ با خبر ہے اسی بات ایف ا ئی ار کی تو ا یک اے ایس آئی نظر عباس جو کہ پو لیس کی وردی پر بد نما داغ ہے کیونکہ معا شرے میں منشیات اور لو گوں سے بھتہ لینا غر یب عوام کو تنگ کر نا کسی ایس ایچ او یا asiکو زیب نہیں د یتا ہے ۔اس حق کو چو نکہ ہمیشہ میں نے پیش کیا صحا فت کے ذر یعے اور نظر عباس اور مظہر جہاں ایس ایچ اُوہمیشہ مجھ سے دہمی گلہ رہا اس لیے موقع کا فا ئدہ ا ٹھا کر ا نھوں نے میرے خلاف یہ سازش کی۔ان کا کہنا ہے میں ان کو کیمرے میں اس ہنگا مہ کے دوران نظر آیا تو کیمرہ میں ایک صحا فی نہیں ا ئے گا تو پھر کون آ ئے گا ان کا کہنا ہے کہ میں مو با ئیل پر بات چیت کر رہا تھا تو میں کسی شر پسند عناصر سے تو بات نہیں کر رہا تھا بلکہ ا پنے چینل کو حالات سے آ گا کر رہا تھا ا گر یہ میرا جرم ہے تو پھر پہلے ملک سے صحا فت کا خا تمہ کیا جا ئے تا کہ پھر کو ئی صحا فی میری طرح کسی حاد ثہ کاشکار نہ ہوملک میں عوام کو سچائی سے باخبر رکھنااور سچی صحافت اگر جرم ہے تو پر یہ بڑے بڑے اخبارات اور چینلزبند کر دیئے جائے تو پھر صحافیوں کوٹارچرنہ کیا جائے میری وزیر اعظم پاکستان سے نواز شریف اور وزیراعلیٰ kpk سے اپیل ہے کہ جھوٹی انصاف کا نعرہ نہ لگائے کیونکہ وہ ایک asi اور sho کی جھوٹی رپورٹ کے سامنے بے بس ہے تو پر ملک کو اور بڑے خطرات سے کیسے بچائیں گے یہ باتیں روئیل نیوز کے بیورو چیف فر حان احمد بنگش نے میڈیا کے نما ئندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کی۔

تبصرہ کیجیے